You are currently viewing سکول کو آگ لگانے کے الزام میں وکیل گرفتار

سکول کو آگ لگانے کے الزام میں وکیل گرفتار

گلگت بلتستان (ڈیسک) گلگت بلتستان  ضلع غذرگاہکوچ سٹی پولیس نے ہاتون میں سکول کو نذر آتش کرنے کے واقعے پر پکڑ دھکڑ کے دوران ہاتون سے تعلق رکھنے والے وکیل کو بھی حوالات میں بند کردیا

پولیس نے رات بھر حوالات میں رکھ کر شدید ذہنی تشدد کیا نوجوان ایڈوکیٹ سلیمان شاہ کو گزشتہ شب رات گئے ان کے گھر واقع ہاتون سے گرفتار کیا گیا انہوں نے پولیس کو منت سماجت کی کہ وہ قانون دان ہیں مگر پولیس نے ایک نہ سنی اور رات بھر گاہکوچ سٹی تھانے میں حوالات کے اندر رکھا گیا علی الصبح وکلاء کی مداخلت پر انہیں رہا کردیا گیا اس واقعے پر جہاں ہاتون کے عوام اور سول سوسائٹی میں شدید غم و غصہ پایا جاتا ہے وہاں غذر کی وکلاء برادری بھی سراپا احتجاج ہے وکلاء نے گزشتہ دن تمام تر عدالتی کاروائیوں کا بائیکاٹ کیا اور اپنے مزمتی بیان میں کہا کہ غذر پولیس اصل مجرمان کو گرفتار کرنے کے بجائے سادہ لوح اور غریب لوگوں کو تنگ کررہی ہے۔ غذر بار ایسوسی ایشن کے عہدیداروں نے مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وکیل کو بے بنیاد الزامات لگاکر رات پر حبس بے جاء میں رکھنے والے پولیس اہلکاروں کو فوری طور پر معطل کیا جائے جبکہ غذر میں پولیس کی اصل ملزمان کے بجائے شریف اور معزز لوگوں کو تنگ کرنے کا سلسلہ ختم کیاجائے پولیس کے اس اقدام سے عوام میں شدید تشویش کی لہردوڑ گئی ہے وکلاء نے دھمکی دیتے ہوئے کہا ہے کہ اگر حکومت نے وکیل سلیمان کو گرفتار کرنے اور رات بھر حبس بے جاء میں رکھنے والے پولیس اہلکاروں کے خلاف کاروائی نہیں کی تو پورے گلگت بلتستان میں وکلاء سراپا احتجاج ہوں گے