You are currently viewing گورنر سندھ اور پنجاب کے لیے 4 نام سامنے آگئے، ایم کیو ایم بھی ڈٹ گئی

گورنر سندھ اور پنجاب کے لیے 4 نام سامنے آگئے، ایم کیو ایم بھی ڈٹ گئی

کراچی (نیوز ڈیسک) صوبہ سندھ اور پنجاب میں گورنر کے عہدے کے لیے ممکنہ نام سامنے آگئے۔
ذرائع کے مطابق مسلم لیگ (ن) گورنر سندھ کے لیے بشیر میمن کے نام پرغور کررہی ہے تاہم اس حوالے سے ابھی حتمی فیصلہ نہیں ہوسکا ہے۔
ذرائع کا کہنا ہے کہ گورنر پنجاب کے لیے مخدوم احمد محمود، قمر زمان کائرہ اور ندیم افضل چن کے نام زیر غور ہیں۔
ذرائع کے مطابق مخدوم احمد محمود پارٹی قیادت کی پہلی ترجیح ہوں گے اور وہ مسلم لیگ (ن) کے لیے بھی قابل قبول ہوں گے۔
یاد رہے کہ وفاق اور صوبوں میں حکومت سازی کے لیے مسلم لیگ (ن) اور پیپلز پارٹی کے درمیان معاملات طے پاگئے ہیں جس کے تحت شہباز شریف وزیراعظم جبکہ آصف زرداری صدر مملکت کے لیے مشترکہ امیدوار ہوں گے۔
ذرائع کے مطابق چیئرمین سینیٹ پاکستان پیپلز پارٹی اور ڈپٹی چیئر مین (ن) لیگ کا ہوگا جبکہ اسپیکر قومی اسمبلی (ن) لیگ اور ڈپٹی اسپیکر پیپلز پارٹی کا ہوگا۔
ذرائع نے بتایا کہ بلوچستان کا وزیراعلیٰ پیپلزپارٹی کا ہوگا، (ن) لیگ اور پیپلز پارٹی مل کر حکومت بنائے گی۔
ذرائع کے مطابق گورنر سندھ اور بلوچستان (ن) لیگ اور گورنر پنجاب پیپلز پارٹی کا ہوگا، پیپلز پارٹی پنجاب کی صوبائی کابینہ میں بھی شامل نہیں ہوگی۔
مزید برآں ایم کیوایم نے سندھ کےلیےگورنرشپ اور وزارتوں پر بھی مطالبات کر رکھے ہیں جبکہ ایم کیوایم کامران ٹیسوری کو گورنر کے عہدے پر برقرار رکھنے کا مطالبہ کررہی ہے۔

ایم کیو ایم پاکستان کے سینئر ڈپٹی کنوینر مصطفیٰ کمال نے کہا ہے کہ سندھ میں گورنر شپ ہمارا حق ہے اس سے دستبردار نہیں ہوں گے۔
نجی ٹی وی سے گفتگوکرتے ہوئے مصطفیٰ کمال نے کہا کہ گورنر سندھ کامران ٹیسوری اچھا کام کررہے ہیں، ان کی بطور گورنر کارکردگی عمدہ ہے اس لیے ان ہی کو آگے چلنا چاہیے۔
انھوں نے کہا کہ ہم نہیں چاہتے سندھ کی گورنری کے معاملے پر کوئی بحث ہو، ایم کیو ایم کے پاس کراچی کا 80 فیصد اور حیدرآباد کا 100 فیصد مینڈیٹ ہے اور سندھ میں گورنر شپ متحدہ کا حق ہے، اس سے دستبردار نہیں ہوں گے۔
مصطفیٰ کمال کا کہنا تھا کہ ڈیڈ لاک کوئی نہیں ہے معاملات طے پا جائیں گے، ہمارا مطالبہ بلدیاتی اداروں کو خودمختار اور مضبوط کرنے کے لیے تین آئینی ترامیم پر حمایت حاصل کرنا ہے، ایم کیو ایم کی کوئی ڈیمانڈ نہیں، ہم اصول پر بات کررہے ہیں ہمارا مقصد اپنے حلقوں میں عوام سے کیے گئے وعدوں کو پورا کرنے کا فارمولہ بنانا ہے۔
انھوں نے مزید کہا کہ حکومت میں برائے نام نہیں رہنا چاہتے، ہماری توجہ لوگوں کو کیسے ڈیلیور کرنا ہے اس پر ہے، ایسا نہ ہو برائے نام حکومت میں ہوں اور عوام کو کچھ ڈیلیور نہ کرسکیں۔
ایم کیو ایم رہنما کا کہنا تھا کہ ایم کیو ایم الیکشن سے پہلے سے (ن) لیگ کے ساتھ کھڑی ہے، صرف نمبر پورے کرکے حکومت بنانا ہی کافی نہیں اسےچلانا بھی ہے۔
ان کا مزید کہنا تھا کہ آئیڈیل صورتحال یہ ہے کہ وزارتیں نہ لیں اور حکومت کا ساتھ دیں کیونکہ یہ حکومت پھولوں کی سیج ثابت نہیں ہوگی۔

Staff Reporter

Rehmat Murad, holds Masters degree in Literature from University of Karachi. He is working as a journalist since 2016 covering national/international politics and crime.