You are currently viewing پی ڈی ایم نے پیر کو سپریم کورٹ کے سامنے بڑے دھرنے کا اعلان کردیا

پی ڈی ایم نے پیر کو سپریم کورٹ کے سامنے بڑے دھرنے کا اعلان کردیا

اسلام آباد (ڈیسک) پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ نے سپریم کورٹ کے رویے کے خلاف عدالت عظمیٰ کے سامنے پیر کو بڑے دھرنے کا اعلان کردیا۔
سربراہ پی ڈی ایم مولانا فضل الرحمان نے اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ سپریم کورٹ مدر آف لاء ہے، مدر ان لاء نہیں ہے۔
انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کے رویے کے خلاف احتجاج کا فیصلہ کیا ہے، پوری قوم سے اپیل کرتا ہوں کہ پیر کو اسلام آباد کی طرف روانہ ہو۔
پی ڈی ایم سربراہ نے مزید کہا کہ عدالت دہشت گردی اور مجرم کو تحفظ دے رہی ہے، سپریم کورٹ نے غبن کو تحفظ دیا، غبن اور غبن کرنے والے کی حوصلہ افزائی کی۔
ان کا کہنا تھا کہ آج ہائیکورٹ نے بھی فیصلے دیے ہیں کہ 9 مئی کے بعد ہوئے واقعات کے بعد درج کسی مقدمے میں عمران خان کے خلاف کارروائی نہ کی جائے۔
مولانا فضل الرحمان نے یہ بھی کہا کہ عمران خان کے خلاف کسی بھی مقدمے میں انہیں گرفتار نہ کیا جائے، یہاں تک کہا گیا کہ کسی مقدمے کا اگر انہیں علم نہ ہو تب بھی انہیں گرفتار نہ کیا جائے۔
انہوں نے کہا کہ اندازہ لگائیں عدلیہ کہاں کھڑی ہے اور کس طرح آئین اور قانون سے ماورا فیصلے دے رہی ہے، کیا یہ رعایت تین مرتبہ کے منتخب وزیراعظم نوازشریف کو دی گئی؟
انہوں نے کہا کہ نوازشریف کو بیمار اہلیہ کی خیریت معلوم کرنے کیلئے ٹیلی فون تک نہیں دیا گیا، کیا اس قسم کی رعایت مریم نواز، فریال تالپور کو دی گئی ؟ آج عمران خان کو وی وی آئی پی پروٹوکول دیا جارہاہے، ریاست کے محافظ اداروں کی آج توہین کی جارہی ہے، ملک کا آئین اور قانون سب کچھ عمران خان کیلئے داؤ پر لگادیا گیا ہے۔
انہوں نے کہا کہ ہم تین دو کا فیصلہ قبول کرنے کیلئے تیار نہیں، ہمارے نزدیک تین چار کا فیصلہ متفقہ فیصلہ ہے۔
انہوں نے کہا کہ کسی نے ہم پر ہاتھ اٹھانے کی کوشش کی تو بھرپور جواب دیا جائے گا، ڈنڈے سے بات کرو گے تو ڈنڈے سے جواب دیں گے، مکے سے بات کروں گے تو مکے سے جواب دیں گے، پتھر سے بات کروں گے تو پتھر سے جواب دیں گے اور ایسا جواب دیں گے کی چھٹی کا دودھ یاد آجائے گا۔
انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کا کوئی شرپسند ہماری صفوں میں داخل ہوا تو اسی وقت پکڑا جائے گا۔
ان کا کہنا تھاکہ ریاست پر حملے طالبان کریں تو غداری اور اگر کوئی گروہ کرے تو اس پر پابندی لگادی جاتی ہے، تحریک انصاف کے خلاف کوئی کارروائی نہ کی جائے تو افسوسناک ہوگا۔

نیوز پاکستان

Exclusive Information 24/7