پاکستان

منی بجٹ 23 جنوری کو پیش کیا جائے گا، وفاقی وزیر خزانہ

کراچی (ڈیسک)وفاقی وزیرخزانہ اسد عمر کا کہنا ہے کہ23 جنوری  کو منی بجٹ  پیش کیا جائے گا ۔

وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر نے کراچی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری پہنچنے پر کراچی چیمبر کے ممبران اور بزنس مین گروپ چئیرمین سراج قاس تیلی سے ملاقات کی۔

میڈیا سے بات کرتے ہوئے وزیرخزانہ اسد عمر نے کہا کہ ہمیں علم ہے کہ ماضی میں قلم کی ایک جنبش سے ہر روز کیا کیا کام کیا گیا ہے، بغیر کسی چیک بیلنس کے کوئی اختیار ہو تو وہ اختیار نقصان دہ ہوگا، ایف بی آر کے سیچوریٹری ریگولیٹری آرڈرز (ایس آر او) کے اجراء کا اختیار ختم کردیا گیا ہے۔

اسد عمر کا کہنا تھا کہ وفاقی حکومت 23 جنوری کو منی بجٹ پیش کرے گی، منی بجٹ میں ٹیکس انامیلز کو دور کیا جائے گا اور ٹیکسوں کے حوالے سے ہر قسم کی تبدیلی پارلیمنٹ کی منظوری سے ہوگی، منی بجٹ کے حوالے سے کراچی چیمبراگلے ہفتے اپنی ٹیم اسلام آباد بھیجے۔

وزیرخزانہ نے کہا کہ 23 جنوری کو آنے والے فنانس بل میں کاروبار آسان بنانے کے اقدامات بروئے کار لائے جارہے ہیں، منی بجٹ میں کھپت کو کم اورسرمایا کاری بڑھانے کے اقدامات ہوں گے، سرمایہ کاری کے ساتھ ساتھ سیونگ کو بھی بڑھانا ہے، پاکستان میں مقامی بچت اورسرمایہ کاری کم ترین سطح تک آگئی ہے، سرمایہ کاری ہوگی تو معیشت آگے بڑھے گی اورروزگار پیدا ہوگا، جب کہ تحریک انصاف کے منشور میں شامل ہے کہ کاروبار میں سہولتیں فراہم کی جائیں گی۔

وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ جنوبی ایشیاء میں علاقائی تجارت نہ ہونے کے برابر ہے، خطے میں پاکستان کی تجارت کو بڑھایا جائے گا، درآمدات کی بنیاد پر کھپت پر قابو پایا جائے گا ، کھپت کی بنیاد پر معیشت چلانے سے تجارتی خسارہ خطرناک حد تک بڑھ گیا ہے جب کہ کاروبار میں آسانی ہیدا کرنے کے لیے ہرماہ وزیراعظم کی صدارت میں اجلاس منعقد کیا جاتا ہے۔

اسد عمر نے کہا کہ وزیراعظم نے بھارت سے مسائل پر بات چیت کیلیے ہاتھ بڑھایا لیکن افسوس کی بات ہے کہ بھارت نے پاکستان کے پیغام کا مثبت جواب نہیں دیا جب کہ ترکی میں عوامی سطح پر پاکستان کیلیے خیرسگالی کا جذبہ ہے لیکن دونوں ملکوں میں تجارت اتنی نہیں، البتہ ترکی سے تجارتی وفود کے تبادلے پر بات چیت ہوئی ہے۔

دوسری جانب بزنس مین گروپ چئیرمین سراج قاس تیلی کا کہنا تھا کہ وفاقی حکومت آئین کے آرٹیکل 158 پر عملدرآمد کو یقینی بنائے اور سندھ سے نکلنے والی گیس سے پہلے سندھ کی ضروریات کو پورا کیا جائے

اس کا اشتراک:

اسلام آباد

آج کا پاکستان اسٹریٹیجک اور سرمایہ کاری کے مواقع سے بھرپور ہے: وزیراعظم

-->

اسلام آباد (ڈیسک)  وزیر اعظم عمران خان کا کہناہے کہ آج کا پاکستان اسٹر ٹییجک  اور سرمایہ کاری کے مواقع سے بھر پور ہے ۔

وزیراعظم عمران خان سے پی ٹی آئی کے سینیٹرز نے وزیراعظم کے چیمبر میں ملاقات کی جس میں سینیٹر شبلی فراز، معاون خصوصی نعیم الحق، سینیٹر فیصل جاوید بھی موجود تھے۔

وزیراعظم اور سینیٹرز کی ملاقات میں ایوان بالا میں پارلیمانی اور قانون سازی سے متعلق مختلف امور خصوصاً بجٹ تجاویز سے متعلق امور پر گفتگو ہوئی۔

وزیراعظم نےایوان بالا کے امور میں اراکین کے کردار سے متعلق اپنے ویژن سے آگاہ کیا۔

اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ عوام پارلیمنٹیرینز کو اپنےحقوق اور امنگوں کے ترجمان کی حیثیت سے دیکھتے ہیں اور اراکین جب عوام کی آواز بنتے ہیں تو عوام کی حوصلہ افزائی ہوتی ہے۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ موجودہ حکومت کی انتھک کوششوں کی بدولت دنیا پاکستان کو انتہائی اہم ملک کی حیثیت سے دیکھ رہی ہے، آج کا پاکستان اسٹریٹیجک اور سرمایہ کاری کے مواقع سے بھرپور ہے، ان شااللہ جلد ہمارا ملک ترقی اور خوشحالی سے ہمکنار ہو گا۔

متعلقہ اشاعت

Continue Reading

اسلام آباد

عوام دشمن بجٹ کسی صورت منظور نہیں ہونے دیں گے، شہباز شریف

-->

اسلام آباد (ڈیسک) قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہباز شریف کا کہنا ہے کہ یہ عوام دشمن بجٹ ہے اس لیے پورا زور لگائیں گے کہ عوام دشمن بجٹ منظور نہ ہو۔

پاکستان مسلم لیگ (ن) کی پارلیمانی پارٹی کا اجلاس پارٹی صدر اور قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کی زیر صدارت ہوا، اجلاس میں پارٹی قائد نواز شریف کی صحت یابی کے لئے دعا بھی کی گئی۔

اس موقع پر شہباز شریف نے کہا کہ نواز شریف سے میری ملاقات ہوئی وہ بہت ہائی سپرٹ میں تھے اور ملکی حالات پر بہت پریشان ہیں جب کہ میرے بارے میں طرح طرح کی افواہیں پھیلانے کی کوشش کی جاتی رہی ہیں۔

بجٹ کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ یہ عوام دشمن بجٹ ہے اس لیے پورا زور لگائیں گے کہ عوام دشمن بجٹ منظور نہ ہو، حکومت جان بوجھ کر بجٹ پر بحث نہیں ہونے دے رہی اور یہ پارلیمانی تاریخ میں پہلی دفعہ حکومت خود بجٹ پر بحث شروع نہیں ہونے دے رہی۔

متعلقہ اشاعت

Continue Reading

اسلام آباد

مصباح الحق نے قومی ٹیم کو ذہنی طور پر کمزور قرار دے دیا

-->

لاہور (ڈیسک)قومی ٹیم کے سابق کپتان مصباح الحق نے ٹیم کو ذہنی طور پر کمزور قرار دے دیا۔

ورلڈ کپ میں  بھارت کے ہاتھوں قومی ٹیم کی شکست پر  مصباح الحق نے کہا کہ پاکستان ٹیم ذہنی طور پر کمزور ہے، میچ کے آغاز سے ہی قومی ٹیم دباؤ میں تھی جس کی وجہ سے کھلاڑیوں نے غلطیاں کیں۔

سابق کپتان ٹیم مینجمنٹ سے بھی ناخوش دکھائی دیے اور کہا کہ‏ ٹیم سلیکشن میں غلطیاں کی گئیں، ‏انہیں یہ علم نہیں کہ 6 اچھے بیٹسمین اور 5 اچھے بولر کون ہیں۔

مصباح الحق کا کہنا تھاکہ ٹیم میں تسلسل اور ڈسپلن کا فقدان ہے، ‏بھارتی ٹیم پاکستان کے مقابلے میں ڈسپلن کےساتھ کھیل رہی ہے، اسی تسلسل کے باعث بھارتی ٹیم ٹورنامنٹ کی ٹاپ ٹیموں میں شامل ہے۔

متعلقہ اشاعت

Continue Reading

Facebook

آج کی سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں